Absar Alam's First Column After Being Attacked

Absar Alam’s First Column After Being Attacked

Employment and journalism

Written by Absar Alam

The two nights spent in the hospital’s ICU without a TV or cell phone after the shooting opened some windows of mind. The immense love, prayers and bouquets of the people were constantly reaching me, I could not believe that the sinner had saved my body and soul by the grace of Allah. His success was not only in not letting his mother know about the accident, but also in listening to some funny things, so he decided to open his heart to his well-wishers and loved ones when his health improved. I will do this so that truth and falsehood can be distinguished and my point of view can reach the people which many TV channels or newspapers do not convey due to personal prejudice or some unknown reasons. So I will talk to you today.
I decided to join the Pakistan Electronic Media Regulatory Authority (PEMRA), including Hamid Mir (and Khawaja Asif), Kashif Abbasi, Umar Cheema, Matiullah Jan and Muhammad Malik (then MD of State TV). After consulting with a dozen journalist friends. People who always mention the salary I get from PEMRA due to lack of knowledge, do not know that before joining PEMRA, my income was such that in that one year I paid Rs. 78 lakhs only in terms of income tax and After the advent of PEMRA, the annual income tax payment was reduced to about Rs. 4.6 million.

When he joined PEMRA, he did not discuss his salary and only said that he should give me the same salary as Muhammad Malik. After that I started my work and for many months I did not get any salary and no one. Mentioned. The first salary was received seven or eight months after joining PEMRA.

In electronic media, a person is so free and prosperous (but this is not the case nowadays) that he never had the desire to take office and even if he did, he would look like an ambassador, teach children outside and lead a contented and peaceful life. He did not wear PEMRA liners, but out of love for journalism, the only purpose was to try to run TV channels according to the prevailing principles of journalism, because genuine journalists were worried that the reputation of the media was declining. And both freedom and prosperity were at stake. And today the freedom of the media and the situation are before you.

PEMRA only enforces the law on TV channels and cables, so I voluntarily decided at that time that I would never work for any TV channel again, even though it is not prohibited by the constitution or the law. I endured four years of unemployment but kept my word and adhered to this principled and ethical decision, even though a few days after leaving PEMRA, Aaj TV offered me to resume its program, which I did. Not accepted due to principle. Witnesses today are TV CEO Shehab Zubair and senior anchor Asma Shirazi. My position was that if I could write, I could do analysis but I would not work for a TV channel, but after the decision to hire PEMRA, all my human rights were suspended? Have all my basic constitutional rights to live, to earn a halal livelihood, to adhere to my ideology, and to speak and write also come to an end?

Under Article 18 of the Constitution, I have the right to do whatever profession or business I want. Article 19 of the Constitution gives every citizen (not just Seth’s employees but every citizen) the right to freedom of expression, so it is my right to write, speak, start a TV channel, express my opinion on existing channels. Express, publish a newspaper or write articles in existing newspapers, do digital media or freelance journalism, do business, get a law license, do politics or teach journalism to university children.

Journalism is not the name of Seth’s job, journalism is the name of the search for truth. When Mirza Ghalib said, “We are not convinced to run in the veins, what is blood if it does not drip from the eye” then he was not in the company of a defeated Mughal commander. When Baba Bulha Shah Sahib’s truth was rumored, he was not a servant of any smuggler, nor did Saadat Hassan Manto mortgage his conscience to a company running porn websites to write the bitter truth. If journalism meant the employment of a seth with a dubious income, then Talat Hussain, Matiullah Jan, Rizwan Razi Dada, Ahmad Noorani and many other hairless and honest journalists would not be unemployed today, Hamid Mir would not be shot, nor would Omar. Cheema would have been abducted and tortured, and Saleem Shehzad and Hayatullah would not have been killed.
The duty to convey the truth to Pakistanis can and will continue even without the employment of TV channels and in this digital age it has already started all over the world.

There are thousands of instances in developed countries where journalists go from politics to government, then come back and no one issues a fatwa on them as here fake fake intellectuals under the guise of imitation and partisan ethics have forced journalism out of Seth’s job. Has been added. Because like Pakistan, media is considered a profession all over the world, not a mafia that you can’t get out of if you become a part of it.

Like the British Prime Minister Churchill, Faiz Ahmed Faiz and Z. A. Sullivan, he also worked as a journalist with a military job. Incumbent British Prime Minister Boris Johnson was a senior journalist, Arif Nizami used to distribute flocks during the day as the Federal Minister of Information
Used to review Prominent Indian journalist Kuldeep Nair’s journey of journalism, politics and diplomacy continued unabated.

Take the example of the venerable Naseem Zehra. She was a writer. She never worked in the newsroom. She did research in the United States for a year at the expense of the Musharraf government. At the same time, she was named among the founders of Pakistan Tehreek-e-Insaf. Become the first information secretary, and then calmly become an anchor.
Similarly, the never-ending journey of Maliha Lodhi and Shirin Mazari from journalism to politics then to embassy, ​​then to journalism, then to politics and embassy and then to journalism and then to politics continues today.

My dear friend Mohammad Malik, who appeared on PTV during Musharraf era, returned to the media as if a plane lands in clear weather. When Nawaz Sharif came with him then on PTV, when the contract expired then in the media and At the same time, he continued to work as an advisor to Shahbaz Sharif. When Nawaz Sharif left the government, the media is playing with the faction again.
There are now dozens of names that cannot be written due to lack of space but have you ever heard anything negative about them all, any sarcasm, mention of salary, all of them were ever told that you are no longer a journalist Stay?

Moeed Pirzada, who also gave me the ‘reward’ of being an anchor through Dunya TV, first became a doctor, then a civil servant, and then a researcher in Geo News, then an anchor and today a ‘journalist’, with an annual budget of crores. Runs the ‘News’ website.
In the same way, retired generals of all kinds become raw analysts and ‘journalists’ and comment on every issue on a daily basis, including politics, but no one whispers, but a few hosts’ mouths dry up when they do’ General Saab, General Saab ‘. However, he also retires, and even decades after retiring, his former boss and colleagues still consider him their own.

Babar Awan, Fawad Chaudhry and Amir Liaquat are both politicians, lawyers and members of parliament or bar associations at the same time, they have been doing TV programs at different times but no one asked if you are a journalist, lawyer or Politicians and even many members of the media recite daily hymns in his honor.
Then why all this against me? Because my entire journalistic life has been spent striving for the dignity of the Constitution, the strength of the democratic process, civilian supremacy, the protection of journalists, the dignity, the fight for rights and a peaceful, prosperous Pakistan. No campaign has been launched for or against politicians at the behest of anyone, criticized Establishment interference in politics, judiciary and media, I have not changed news and opinion despite pressure under General Pervez Musharraf and I do not do it now.
Despite the pressure, PEMRA did only what was in accordance with the constitution and the law, whether it was to stop Ehsanullah Ehsan’s interview or to try to remove some TV channels from cable, to spread hatred and incite violence in the country despite the most intense pressure. Enforced the law on anchors and TV channels.

These are the ‘crimes’ that only target me and some anchors who breathe a sigh of relief in their efforts to enforce the law on others, PEMRA occasionally sent notices to them for violating the code of conduct. So instead of facing legal action like a civilized man, he made himself above the law. They are at the forefront of the campaign against me. Although the first and foremost fines and bans came in the ‘Geo’ and ‘Aaj’ sections where I had worked myself, both channels accepted the implementation of the law on their behalf with open heart and democratic attitude.

During PEMRA’s refusal to accept the pressure, unknown people in different cities registered 27 criminal cases against me for sedition because I did not accept pressure or threats.

Even after getting out of there, I did not feel at ease. I kept trying to get my PEMRA salary back. When I did not get there, the words of a few tweets from my small Twitter account were also used against the oppressive system. Cases of treason, sedition, serious treason (punishable by life imprisonment) and Article 6 punishable by death have been registered.

Cases were filed in the FIA ​​under the Cyber ​​Crimes Act last month. I am facing all these cases.
And during this Ramadan walk, when I saw Nusrat Fateh Ali … “I don’t know, I don’t trust friends, I don’t trust friends …” As I was listening, I was assassinated.

The children who took me to the hospital on the way encouraged me as well as made videos from their phones so that the police would not take any action against them. He later made the video public.
It was said that no blood came out, more blood comes out from where the bullet enters, bloody pictures were taken from the side and released by the police, the bullet injured the liver and broke the rib and came out from the front and broke the rib. There is no bleeding.
One Sahib Mir Ali said that if a bullet is fired in the rib, a person cannot get up, yes, but if God wills, a person can stand and walk and everyone saw that this is what happened.

I do not know those who object, but my faith in my Lord is very strong. Whatever happened is due to His will. I have no grudge against anyone in my heart. I have entrusted the affairs of some people to Allah. Stick to the ideology and always will be. I will not work for TV channels but I have the right to exercise the rights given in Articles 18 and 19 of the constitution and I will always exercise that right, the one who kills and saves belongs to Allah and I am the Lord of sinners.

God willing, he is as happy as I keep it.
I am not a believer
Nor do I have the sand of disbelief
Nor do I clean the dishes
Neither Moses nor Pharaoh
Who cares?

مُلازمت اور صحافت

تحریر: ابصار عالم

گولی لگنے کے بعد ہسپتال کے آئی سی یو میں ٹی وی اور موبائل فون کے بغیر گزاری دو راتوں نے ذہن کے کُچھ دریچے کھولے۔ لوگوں کی بے پناہ محبتیں، دعائیں اور گُلدستے مُجھے مسلسل پہنچ رہے تھے، اللہ کے کرم سے اپنی جسم و جان کے بچ جانے پر مُجھ گناہگار کو یقین ہی نہیں آ رہا تھا۔ اپنی کامیابی صرف اس بات کو سمجھ رہا تھا کہ اپنی ماں کو اس حادثے کا پتہ نہیں چلنے دیا، لیکن ساتھ ساتھ کُچھ مضحکہ خیز باتیں بھی سُنیں تو فیصلہ کیا جب کچھ صحت بہتر ہوگی تو اپنے خیر خواہوں اور محبت کرنے والوں کے سامنے دل کھول کر رکھوں گا تا کہ سچ اور جھوٹ میں تمیز ہو سکے اور لوگوں تک میرا پوائنٹ آف ویو بھی پہنچے جو کہ کئی ٹی وی چینل یا اخبار ذاتی تعصب یا کُچھ نامعلوم وجوہات کی بنا پر نہیں پہنچاتے۔ تو آج آپ سے کُچھ باتیں کروں گا۔
میں نے پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) جوائن کرنے کا فیصلہ حامد میر (اور خواجہ آصف)، کاشف عباسی، عمر چیمہ، مطیع اللہ جان اور محمد مالک (جو اُس وقت سرکاری ٹی وی کے ایم ڈی تھے)، سمیت تقریباً ایک درجن صحافی دوستوں سے مشورے کے بعد کیا۔ جو لوگ کم علمی کی وجہ سے ہر وقت مجھے پیمرا سے ملنے والی تنخواہ کا ذکر کرتے ہیں، نہیں جانتے کہ پیمرا جوائن کرنے سے پہلے میری آمدن اتنی تھی کہ اُس ایک سال میں 78 لاکھ روپے صرف اِنکم ٹیکس کی مد میں ادا کیے تھے اور پیمرا آنے کے بعد اِنکم ٹیکس کی سالانہ ادائیگی کم ہو کر تقریباً 46 لاکھ روپے رہ گئی۔

پیمرا جوائن کرتے وقت اپنی تنخواہ پر کوئی بات چیت ہی نہیں کی اور صرف یہ کہا کہ جتنی تنخواہ محمد مالک کی ہے اتنی ہی مُجھے دے دیں، اس کے بعد میں اپنے کام میں لگ گیا اور کئی مہینوں تک نہ تنخواہ ملی اور نہ ہی کوئی ذکر ہوا۔ پہلی تنخواہ پیمرا جوائن کرنے کے سات یا آٹھ ماہ بعد ملی۔

الیکٹرانک میڈیا میں انسان اتنا آزاد اور خوشحال ہوتا ہے (لیکن آج کل ایسا نہیں ہے) کہ عُہدہ لینے کی خواہش کبھی تھی ہی نہیں اور اگر ہوتی بھی تو کہیں سفیر لگتا، بچوں کو باہر پڑھواتا اور ایک مطمئن اور پُر سکون زندگی گزارتا۔ یہ پیمرا والی استروں کی مالا گلے میں نہ ڈالتا لیکن صحافت سے مُحبت کی وجہ سے مقصد صرف یہ تھا کہ ٹی وی چینلز کو مروجہ صحافتی اصولوں کے مطابق چلانے کی کوشش کی جائے کیونکہ جینوئن صحافی پریشان تھے کہ میڈیا کی ساکھ مسلسل گرتی جا رہی تھی اور آزادی اور خوشحالی دونوں خطرے میں تھی۔ اور آج میڈیا کی آزادی اور حالات آپ کے سامنے ہیں۔

پیمراصرف ٹی وی چینلز اور کیبلز پر قانون کا نفاذ کرتا ہے لہٰذا میں نے رضاکارانہ طور پر اسی وقت فیصلہ کر لیا کہ میں اب کبھی کسی ٹی وی چینل کی مُلازمت نہیں کروں گا حالانکہ آئین یا قانون میں اس کی ممانعت نہیں۔ میں نے چار سال بیروزگاری سہہ لی لیکن زُبان کا مان رکھا اور اس اصولی اور اخلاقی فیصلے پر قائم رہا، حالانکہ پیمرا سے نکلنے کے کُچھ ہی دنوں بعد ‘آج ٹی وی’ نے مُجھے دوبارہ اپنا پروگرام شروع کرنے کی آفر کی جو میں نے اپنے اصول کی وجہ سے قبول نہیں کی۔ اس بات کے گواہ آج ٹی وی کے CEO شہاب زبیری اور سینیئر اینکر عاصمہ شیرازی ہیں۔ میرا موقف تھا کہ لکھ تو سکتا ہوں، تجزیہ کاری بھی کر سکتا ہوں مگر ٹی وی چینل کی مُلازمت نہیں کروں گا، لیکن کیا پیمرا کی ملازمت کرنے کے فیصلے کے بعد میرے تمام انسانی حقوق معطل ہو گئے؟ کیا میرے زندہ رہنے، رزق حلال کمانے، اپنے نظریے پر قائم رہنے، اور لکھنے بولنے کے تمام بنیادی آئینی حقوق بھی ختم ہو گئے؟

آئین کے آرٹیکل 18 کے تحت میرا حق ہے کہ میں جو پیشہ اختیار یا کاروبار کرنا چاہوں وہ کر سکتا ہوں۔ آئین کا آرٹیکل 19 ہر شہری کو (صرف سیٹھ کے مُلازمین کو نہیں بلکہ ہر شہری کو) آزادی اظہار رائے کا حق دیتا ہے، لہٰذا یہ میرا حق ہے کہ میں لکھوں، بولوں، ٹی وی چینل شروع کروں، موجود چینلز پر اپنی رائے کا اظہار کروں، اخبار نکالوں یا موجودہ اخبارات میں آرٹیکل لکھوں، ڈیجیٹل میڈیا یا فری لانس صحافت کروں، کاروبار کروں، وکالت کا لائسنس لوں، سیاست کروں یا یونیورسٹی کے بچوں کو صحافت پڑھاؤں۔

صحافت سیٹھ کی مُلازمت کا نام نہیں، صحافت سچ کی تلاش کا نام ہے۔ مرزا غالب نے جب کہا کہ ‘رگوں میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل، جو آنکھ ہی سے نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے’ تو وہ کسی شکست خوردہ مغل کماندار کی اردُل میں نہیں تھا۔ بابا بُلھے شاہ صاحب کا سچ جب بھانبڑ مچاتا تھا تو وہ کسی سمگلر کے نوکر نہیں تھے اور نہ ہی سعادت حسن منٹو نے کڑوا سچ لکھنے لیے اپنا ضمیر کسی پورن ویب سائٹس چلانے والی کمپنی کو گروی رکھوایا۔ اگر صحافت کا معنی کسی مشکوک آمدنی والے سیٹھ کی مُلازمت ہے تو طلعت حُسین، مطیع اللہ جان، رضوان رضی دادا، احمد نورانی اور بہت سے دوسرے بے بال اور ایماندار صحافی آج بے روزگار نہ ہوتے، حامد میر کو گولیاں نہ لگتیں، نہ عمر چیمہ کو اغوا کر کے اُس پر تشدد کیا جاتا اور نہ ہی سلیم شہزاد اور حیات اللہ قتل ہوتے۔
سچ کو پاکستانیوں تک پہنچانے کا فرض ٹی وی چینلز کی نوکری کے بغیر بھی جاری رہ سکتا ہے، رہے گا اور اس ڈیجیٹل دور میں دنیا بھر میں ایسا پہلے ہی شروع ہو چکا ہے۔

ترقی یافتہ ملکوں میں ایسی ہزاروں مثالیں ہیں کہ صحافی سیاست سے حکومت میں جاتے ہیں، پھر واپس آتے ہیں اور کوئی اُن پر فتوی جاری نہیں کرتا جیسے یہاں نقلی اور جانب دارانہ اخلاقیات کے پردے میں جعلی دانشوروں نے صحافت کو سیٹھ کی نوکری سے لازم و ملزوم کر دیا ہے۔ کیونکہ پاکستان کی طرح دنیا بھر میں میڈیا کو پروفیشن سمجھا جاتا ہے، مافیا نہیں کہ اگر آپ اس کا حصہ بن جائیں تو باہر نہیں نکل سکتے۔

برطانیہ کے وزیراعظم چرچل، فیض احمد فیض اور زیڈ اے سُلیری کی طرح فوج کی نوکری کے ساتھ صحافت بھی کرتے رہے۔ موجودہ برطانوی وزیراعظم بورس جانسن سینیئر صحافی تھے، عارف نظامی دن کو وفاقی وزیر اطلاعات کے طور پر ریوڑیاں بانٹتے تھے اور شام ڈھلے پُرسکون لمحات میں نوائے وقت اور دی نیشن کی جابر سلطان کے سامنے کلمہ حق کہنے والی پالیسی کا باریک بینی سے جائزہ لیتے تھے۔ انڈیا کے مایہ ناز صحافی کُلدیپ نائیر کا صحافت، سیاست اور سفارت کاری کا سفر مُسلسل جاری رہا۔

آپ قابل احترام نسیم زہرہ کی مثال لے لیں، لکھاری تھیں کبھی نیوز روم میں کام نہیں کیا، مشرف سرکار کے خرچے پر امریکہ میں ایک سال تک ریسرچ وغیرہ بھی کی، اسی دور میں پاکستان تحریک انصاف کے بانیوں میں نام بھی لکھوایا اور پارٹی کی پہلی سیکرٹری اطلاعات بھی بنیں، اور پھر سکون سے اینکر بن گئیں۔
اسی طرح ملیحہ لودھی اور شیریں مزاری کا صحافت سے سیاست پھر سفارت، پھر صحافت، پھر سیاست اور سفارت اور پھر صحافت اور پھر سیاست کا نہ ختم ہونے والا سفر آج بھی جاری ہے۔

میرے پیارے دوست محمد مالک، مشرف دور میں پی ٹی وی میں پدھارے، میڈیا میں واپسی ایسے ہوئی جیسے جہاز صاف موسم میں لینڈ کرتا ہے، نواز شریف آئے تو اُن کے ساتھ پھر پی ٹی وی میں، کنٹریکٹ ختم ہوا تو پھر میڈیا میں اور ساتھ ساتھ شہباز شریف کے مشیر کا بھی کام کرتے رہے، نواز شریف حکومت گئی تو دوبارہ دھڑلے سے میڈیا میڈیا کھیل رہے ہیں۔
ابھی درجنوں ایسے نام ہیں جو جگہ کی قلت کی وجہ سے لکھ نہیں پا رہا لیکن کیا آپ لوگوں نے ان سب کے بارے میں کُبھی بھی کُچھ منفی سُنا، کوئی طعنہ، تنخواہ کا ذکر، کبھی ان سب کو کہا گیا کہ آپ اب صحافی نہیں رہے؟

معید پیرزادہ، جن کودُنیا ٹی وی کے ذریعے اینکر بنانے کا ‘ثواب’ بھی مُجھے حاصل ہوا، پہلے ڈاکٹر بنے، پھر سول سرونٹ بن گئے، اور پھر جیو نیوز میں ریسرچر، پھر اینکر اور آج ‘صحافی’ ہیں، سالانہ کروڑوں کے بجٹ کی ‘نیوز’ ویب سائٹ چلاتے ہیں۔
اسی طرح انواع و اقسام کے ریٹائرڈ جنرلز، کچے پکے تجزیہ کار اور ‘صحافی’ بن کر سیاست سمیت ہر معاملے پر روزانہ رائے زنی کرتے ہیں لیکن کوئی چُوں نہیں کرتا بلکہ چند میزبانوں کا ‘جنرل صاب، جنرل صاب’ کرتے مُنہ خُشک ہو جاتا ہے حالانکہ پینشن بھی لیتے ہیں اور ریٹائرڈ ہونے کے کئی دہایئوں بعد بھی اُن کا سابق ادارہ اور ساتھی اُنہیں اپنا بھی سمجھتے ہیں۔

بابر اعوان، فواد چوہدری اور عامر لیاقت ایک ہی وقت میں سیاستدان بھی ہیں، وکیل بھی اور پارلیمنٹ یا بار ایسوسی ایشن کے ممبرز بھی، مختلف اوقات میں ٹی وی پروگرام بھی کرتے رہے لیکن کسی نے نہیں پوچھا کہ بھائی تم صحافی ہو، وکیل یا سیاستدان بلکہ میڈیا کے کئی لوگ ان کی شان میں روزانہ قصیدے بیان کرتے ہیں۔
پھر یہ سب کُچھ میرے ہی خلاف کیوں؟ اس لیے کہ میری ساری صحافتی زندگی آئین کی عزت، جمہوری عمل کی مضبوطی، سویلین بالادستی، صحافیوں کی حفاظت، عزت، حقوق کی جنگ اور پُرامن، خوشحال پاکستان کی کو شش کرتے گزری۔ کسی کے کہنے پر سیاستدانوں کے حق میں یا اُن کے خلاف کوئی کیمپین نہیں چلائی، سیاست، عدلیہ اور میڈیا میں اسٹیبلشمنٹی مُداخلت پر تنقید کی، جنرل پرویز مشرف کے دور میں دباؤ کے باوجود خبر اور رائے تبدیل نہیں کی اور نہ اب کرتا ہوں۔
پیمرا میں دباؤ کے باوجود صرف وہی کام کیا جو آئین اور قانون کے مطابق تھا چاہے وہ احسان اللہ احسان کا انٹرویو رُکوانا ہو یا چند ٹی وی چینلز کو کیبل سے ہٹانے کی کوشش، شدید ترین دباؤ کے باوجود مُلک میں نفرت پھیلانے اور تشدد پر اُکسانے والے اینکرز اور ٹی وی چینلز پر قانون کا نفاذ کیا۔

یہ ہیں وہ ‘جرائم’ جن کی وجہ سے صرف میں ٹارگٹ ہوتا ہوں اور کچھ اینکرز جن کا دوسروں پر قانون نافذ کروانے کی جدوجہد میں سانس پُھول جاتا ہے، اُن کو پیمرا نے اس وقت ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی پر کبھی کبھار کوئی نوٹس بھیجا تو بجائے مہذب انسان کی طرح قانونی عمل کا سامنا کرنے کے، اپنے آپ کو قانون سے بالاتر بنا لیا۔ وہ میرے خلاف مہم میں پیش پیش ہیں۔ حالانکہ سب سے پہلے اور سب سے زیادہ جرمانے اور بندشیں ‘جیو’ اور ‘آج’ کے حصے میں آئیں جہاں میں خود کام کر چکا تھا لیکن دونوں چینلز نے اپنے اوپر قانون کے نفاذ کو کھلے دل اور جمہوری رویے سے قبول کیا۔

دباؤ قبول کرنے سے انکار پر پیمرا کے دور میں مُجھ پر مُختلف شہروں میں نامعلوم لوگوں نے بغاوت کے الزام میں 27 فوجداری مقدمات درج کروائے گئے کیونکہ میں نہ دباؤ مانتا تھا نہ دھمکی۔

وہاں سے نکلوا کر بھی سکون نہ ملا تو پیمرا کی تنخواہ واپس لینے کے لیے مسلسل سر پٹختے رہے، جب وہاں دال نہ گلی تو میرے چھوٹے سے ٹوئٹر اکاؤنٹ کے چند ٹویٹس کے الفاظ بھی ظالم نظام پر گراں گُزرے، پچھلے سال دینہ میں مُجھ پر غداری، بغاوت، سنگین غداری (جس کی سزا عمر قید ہے) اور آرٹیکل 6 کے مقدمے درج کروا دیے گئے جس کی سزا موت ہے۔

پچھلے مہینے ایف آئی اے میں سائبر کرائم ایکٹ کے تحت مقدمات بنائے گئے۔ میں ان سب مقدمات کا سامنا کر رہا ہوں۔
اور اس رمضان المبارک میں واک کے دوران جب میں نصرت فتح علی کا ۔۔۔ ‘جان پہچان کیا دُشمنوں سے، دوستی کا بھروسہ نہیں ہے۔۔۔’ سُن رہا تھا تو مُجھ پر قاتلانہ حملہ ہوا۔

راستے میں ہسپتال لے جانے والے بچے میرا حوصلہ بڑھانے کے ساتھ ساتھ اپنے فون سے ویڈیو بناتے رہے تا کہ پولیس اُن کے خلاف کوئی ایکشن نہ لے۔ بعد میں اُنہوں نے وہ ویڈیو پبلک کر دی۔
کہا گیا خون نہیں نکلا، گولی جہاں سے داخل ہوتی وہاں زیادہ خون نکلتا ہے، سائیڈ سے داخل ہوئی وہاں کی خون آلود تصویریں پولیس نے بنائیں اور جاری کیں، گولی جگر کو زخمی کر کے پسلی توڑتے ہوئے سامنے سے نکل گئی اور پسلی ٹوٹنے سے خون نہیں نکلتا۔
ایک صاحب میر علی نے کہا کہ پسلی میں گولی لگے تو انسان اُٹھ ہی نہی سکتا، جی درست لیکن اگر رب چاہے تو انسان کھڑا رہ سکتا اور چل بھی سکتا اور سب نے دیکھا کہ ایسا ہی ہوا۔

اعتراضات کرنے والوں کا مُجھے پتہ نہیں لیکن میرا اپنے رب پر ایمان بہت مضبوط ہے، جو کُچھ بھی ہوا اُس کی رضا سے ہوا، میرے دل میں کسی کے خلاف کینہ نہیں، کُچھ لوگوں کا معاملہ اللہ کے سپرد کر دیا ہے، آئینی بالادستی کے نظریے پر بھی قائم ہوں اور ہمیشہ رہوں گا۔ ٹی وی چینلز کی ملازمت بھی نہیں کروں گا لیکن آئین کے آرٹیکل 18اور 19 میں دیے گئے حقوق کا استعمال میرا حق ہے اور وہ حق ہمیشہ استعمال کروں گا، مارنے اور بچانے والی ذات اللہ کی ہے اور مجھ گناہ گار کا رب صرف اللہ ہے، وہ جیسے رکھے میں ویسے خوش۔
نہ میں مومن وچ مسیتاں
نہ میں وچ کُفر دیاں ریتاں
نہ میں پاکاں وچ پلیتاں
نہ میں موسی، نہ فرعون
بُھلا کی جاناں میں کون

CATEGORY :  Latest Posts

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *